Urdu Poetry !! ( اُردُو شاعرى )


پِھر اُن کی گلی میں پہنچے گا، پھر سِہو کا سجدہ کر لے گا
اِس دل پہ بھروسہ کون کرے، ہر روز مُسلماں ہوتا ہے

———

اب اُن سے دُور کا بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ واسطہ نہیں ناصرؔ
وہ ہمنوا ۔۔۔۔۔۔۔ جو مِرے رتجگوں میں شامِل تھے !!

———

آ تجہے جزو زندگی کر لوں
تو کہیں رائگاں نہ ہو جاے !

——— 


ترے خیال میں جب بے خیال ھوتا ھوں
ذرا سی دیر سہی لازوال ھوتا ھوں

———

خدا کے واسطے داد اس جنونِ شوق کی دینا
کہ اس کے در پہ پہنچتے ہیں نامہ بر سے ہم آگے

———

اخلاص کی جاگیر کو ھم اہل محبت
تقسیم تو کر دیتے ہیں بیچا نہیں کرتے

———

تجھے برباد کر دوں گی ابھی بھی لوٹ جا واپس
مجھے قاتل بھی کہتے ھیں محبت نام ھے میرا

———

تجھے برباد کر دوں گی ابھی بھی لوٹ جا واپس
مجھے قاتل بھی کہتے ھیں محبت نام ھے میرا

———

شانے تیرے چاندی چاندی،زلفیں سونا سونا
چور بنا دیتا ہے سب کو یہ سرمایہ تیرا

——— 


یہ اداسیوں کے موسم یونہی رائیگاں نہ جائیں
کسی یاد کو پکارو _____ کسی درد کو جگاؤ

———

آئے گا وقت تو دیکھائیں گے تم کو اپنا خلوص
ابھی خاموش ہیں ہم کو بس خاموش ہی رہنے دو

———

سب سے کہتا ہے بس تمہی تم ہو
آئنہ بھی بلا کا جھوٹا ہے

———

جھٹپٹے کی ساعتوں کا ذکر اب ہم کیا کریں
دیکھتے ہی دیکھتے غم موسمِ جاں ہو گیا

———

اڑنے لگے آکاش پہ جلتے ہوئے تارے
جب شام ڈھلے ہار کے ڈوبا کوئی سورج

———

غریبِ شہر تو فاقوں سے مر گیا عارف
امیرِ شہر نے ہیرے سے خود کشی کر لی

——— 


شمع چپ ہے بھی تو کیا، دل کا اجالا بولے
وہ سنے یا نہ سنے رات کا سکتہ بولے

———

عالمِ رنگ و تماشا سے گزر
کوئی قیمت نہیں بینائی کی

———

ہے عجیب کشمکش میں مری شمعِ آرزو بھی
میں جَلا جَلا کے دیکھوں ، وہ بُجھا بُجھا کے دیکھے

———

پھر نظر میں پھول مہکے ، دل میں پھر شمعیں جلیں
پھر تصور نے لیا، اُس بزم میں جانے کا نام

———

کتاب عشق لکھنے کی مجھے فرصت نہیں صاحب
ابھی تک بے وفائی پر۔۔۔۔۔۔۔۔ میری تحقیق جاری ہے —